توبہ اور اسکی فضیلت واہمیت

ارشاد باری تعٰالی

یٰٓاَیُّھَاالَّذِیْنَ اٰمَنُوْا تُوْبُوْا اِلیَ اﷲِ تَوْبَۃًنَّصُوْحًا ط عَسٰی رَبُّکُمْ اَنْ یُّکَفِّرَ عَنْکُمْ سَیِّاٰ تِکُمْ وَ یُدْ خِلَکُمْ جَنّٰتٍ تَجْرِیْ مِنْ تَحْتِھَاالْاَنْھٰرُ۔

ترجمہ۔اے ایمان والو توبہ کرو اﷲ کی طرف صاف دل کی توبہ،امید ہے تمہارا رب اتار دے تم پر سے تمہاری برائیاں اور داخل کرے تم کو باغوں میں جن کے نیچے نہریں بہتی ہیں۔
گناہ گاروں کو اﷲکی رحمت سے مایوس نہیں ہونا چاہئے۔
ارشاد باری تعٰالی

قُلْ یٰعِبَادِیَ الَّذِیْنَ اَسْرَفُوْاعَلآی اَنْفُسِھِمْ لَا تَقْنَطُوْا مِنْ رَّحْمَۃِاﷲِ ط اِنَّ اﷲَ یَغْفِرُالذُّنُوْبَ جَمِیْعًا ط اِنَّہٗ ھُوَالْغَفُوْرُالرَّحَیْمُo وَاَنِیْبُْوٓااِلٰی رَبِّکُمْ وَ اَسْلِمُوْالَہٗ مِنْ قَبْلِ اَنْ یَّاْتِیَکُمُ الْعَذَابُ ثُمَّ لَا تُنْصَرُوْنَo

(الزمر۵۳)
ترجمہ۔کہہ دے اے میرے بندو کہ جنہوں نے زیا دتی کی ہے اپنی جان پر آس مت توڑو اﷲ کی مہربانی سے بے شک اﷲ بخشتا ہے سب گناہ وہ جو ہے وہی ہے گناہ معاف کر نے والا اور مہربان۔ اور رجوع ہو جاو اپنے رب کی طرف اور اس کی حکم بر داری کرو پہلے اس سے کہ آئے تم پر عذاب پھر کوئی تمھاری مدد کو نہ آئے گا۔
تشریح۔یہ آیت ارحم الرحمین کی بے پایاں رحمت اور عفو و در گزر کی شان عظیم کا اعلان کرتی ہے۔مشرک،ملحد،زندیق،مرتد،یہودی،نصرانی،مجوسی،بدعتی،بدمعاش،فاسق،فاجر،کوئی ہواس آیت کو سننے کے بعد خدا کی رحمت سے بالکل مایوس ہو جانے اور آس توڑ کر بیٹھ جانے کی اس کے لئے کوئی وجہ نہیں۔کیوں کہ اﷲ جس کے چاہے سب گناہ معاف کر سکتا ہے کوئی اس کا ہا تھ نہیں پکڑ سکتا۔پھر بندہ نا امید کیوں ہو۔ہاں یہ ضرور ہے کہ اس کے دوسرے اعلانات میں یہ وضاحت کر دی گئی کہ کفروشرک کا جرم بغیر توبہ کے معاف نہیں کرے گا۔مغفرت کی امید دلا کر توبہ کی طرف متوجہ فرمایا یعنی سابقہ غلطیوں پر شرمندہ ہو کر اﷲ کی بے پناہ رحمت سے شرما کر کفر اور گناہوں کی راہ چھوڑو اور اس رب کریم کی طرف رجوع ہو کر اپنے آپ کو اسکے حوالے کر دو۔اسکے حکموں کے سامنے نہایت عاجزی اور انکساری کے ساتھ گردن جھکا دو۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے