تقریظ حضرت مولانا قاری محمد حنیف صاحب جالندھری (ناظم اعلیٰ وفاق المدارس العربیہ پاکستان)

الحمد ﷲ و سلام علیٰ عبادہ الذین ا صطفیٰ
حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے آنحضرت ﷺ کا یہ ارشاد منقول ہے کہ 249249حیا اور ایمان ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں،ان میں سے کوئی ایک اٹھ جائے تو دوسرا خود بخود اٹھ جاتا ہے۔ (مشکوۃ صفحہ ۴۳۲ جلد ۲)
اس وقت پوری دنیا فحاشی وبے حیائی کی آگ کی لپیٹ میں ہے رفتہ رفتہ اس آگ کے شعلے عالم اسلام کو بھی اپنی لپیٹ میں لے رہے ہیں ۔حیا سوز فلموں میں عریانیت، فحاشی اور جنس پرستی کی با قاعدہ تعلیم دی جاتی ہے۔اخبارات کے کئی کئی صفحات نیم عریاں نسوانی تصویروں پر مشتمل ہوتے ہیں۔متعدد رسائل و جرائدفحش افسانوں اور بے حیائی کے مضامین سے پر ہوتے ہیں۔ بازاروں میں ایسی بلیو فلمیں عام بک رہی ہیں جن میں انسانوں کو جانوروں کی طرح جنسی اختلاط کرتے ہوئے دکھا یا گیا ہے۔ بے حیائی اور بد اخلاقی کا یہ زہر نئی نسلوں کے رگ و پے میں اس طرح اتارا جا رہا ہے کہ وہ شرم و حیا ،عفت و عصمت اور شرافت و پاکدامنی کے الفاظ سے بھی نا آشنا ہوتی جا رہی ہے،اس دردناک صورت حال میں ضرورت ہے کہ امت کا ایک قابل ذکر طبقہ بے حیائی ٖ،فحاشی اور معاشرتی بے راہ روی کے سیلاب کے آگے بند باندھنے کے لیے کمر بستہ ہو جائے،ان حالات میں جناب حذیفہ چنیوٹی اور ان کے رفقاء نے خشتِ اوّل رکھ کر کام کا آغاز کر دیا ہے،ضرورت ہے کہ اس اہم کام کی طرف دوسرے شہروں کے نوجوان بھی متوجہ ہوں۔اﷲ تعالیٰ ان کی محنتوں کو بار آور فرمائیں اور اسلامی معاشرت کو زندہ فرمائیں۔ (آمین)
دعا گو ودعا جو (مولانا)محمد حنیف جالندھری ۱۸ محرم الحرام ۱۴۳۵ ھ ۔۲۳ نومبر ۲۰۱۳ ء

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے