مفسدات نماز

ان چیزوں کو کہتے ہیں جن سے نماز ٹوٹ جاتی ہے اور اسے لوٹانا ضروری ہوتا ہے چند مفسدات نماز یہ ہیں

۱۔ نماز میں کلام کرنا چاہیے قصدا ہو یا بھول کر تھوڑا ہو ہا بہت ہر صورت میں نماز ٹوٹ جاتی ہے
۲۔ سلام کرنا یعنی کسی کو سلام کرنے کے قصد سے سلام یا تسلیم یا السلام علیکم یا اسی جیسا کوئی لفظ کہہ دینا
۳۔ سلام کا جواب دینا یا چھینکنے والے کو یرحمک اللہ یا نما ز سے باہر والے کسی شخص کی دعا پر آمین کہنا
۴۔ کسی بری چیز پر انا للہ و انا الیہ راجعون پڑھنا یا کسی اچھی خبر پر الحمد للہ کہنا یا کسی عجیب نات پر سبحان اللہ کہنا
۵۔ درد و رنج سے آہ یا اف کہنا
۶۔ اپنے امام کے سوا کسی دوسرے کو لقمہ دہنا یعنی قرات بتانا
۷۔ نماز میں قرآن شریف دیکھ کر پڑھنا
۸۔ عمل کثیر کرنا یعنی کوئی ایسا کام کرنا جس سے دیکھنے والے یہ سمجھیں یہ نماز نہیں پڑھ رہا ہے
۹۔ قرآن مجید پڑھنے میں کوئی غلطی کرنا
۱۰۔ کھانا پینا قصدا یا بھولے سے
۱۱۔ دو صفوں کی مقدار کے برابر چلنا
۱۲۔ قبلے کی طرف سے بلاعذر رخ پھیر لینا
۱۳۔ ناپاک جگہ پر سجدہ کرنا
۱۴۔ ستر کھل جانے کی حالت میں ایک رکن کی مقدر ٹھہرنا
۱۵۔ عدا میں ایسی چیز مانگنا جو آدمیوں سے مانگی جاتی ہے مثلا یا اللہ مجھے آج سو روپے دے دے۔
۱۶۔ درد یا مصیبت کی وجہ سے اس طرح رونا کہ آواز میں حروف ظاہر ہو جائیں
۱۷۔ بالغ آدمی کا نماز میں قہقہے مارکر یا آواز سے ہنسنا
۱۸۔ امام سے آگے بڑھ جانا وغیرہ
۱۹۔ تکبیر تحریمہ کہتے وقت لفظ اللہ کے الف کو بڑھا دینا اور اللہ اکبر کے شروع میں الف بڑھا دینا اور اللہ اکبر پڑھنا اسی طرح اگر اکبر کی باء کو بڑھا کر پڑھا اور اللہ اکنار کہا